سٹوری آف وقارِ پاکستان : Marvels of Pakistan
مختصرتعارف: ادب سرائے انٹرنیشنل اور مارول سسٹم لیٹریری اینڈ کارپوریٹ ریسرچ فورم
ادب سرائے انٹرنیشنل جس کی بنیاد ڈاکٹر شہناز مزمل کی سرپرستی میں لاہور میں سال 1987 میں رکھی گئی، اور مارول سسٹم لیٹریری اینڈ کارپوریٹ ریسرچ فورم جس کی بنیاد سال 1995 میں میاں وقارلاسلام کی سرپرستی میں ملتان میں رکھی گئی ۔
آج سال 2019 میں دونوں پلیٹ فارمز کی مشترکہ لائف نصف سینچر ی سے زیادہ ہو چکی ہے اور دونوں ادارے اپنے انفرادی کام کی وجہ سے ملکی اور بین القوامی سطح پر جانے پہچانے جاتے ہیں۔

ادب سرائے انٹرنیشنل نے اپنے ادبی پروگرامز کا باقاعدہ آغاز 1987 میں ادارے کی تشکیل کے ساتھ ہی ادب سرائے انٹرنیشنل ہیڈ آفس 125 ایف ماڈل ٹاون سے کر دیا۔ یہ ایک سنہرے ادبی دور کا آغاز تھا۔ پانئیرز میں بہت سے نامور شعراء ، شاعرات اور ادب سے محبت رکھنے والے لوگ شامل تھے جنہیں ہم کبھی بھی بھلا نہیں سکتے۔

ڈاکٹر شہناز مزمل صاحبہ نے بطور چئیر پرسن اپنے فرائض سنبھالے اور جناب فیصل حنیف صاحب کو ادارے کی صدارت کا عہدہ دیا گیا ،ان کے ساتھ جناب محمود سرور صاحب ادارے کے نائب صدر منتخب ہوئے یوں ادارے نے اپنا ابتدائی سفر شروع کیا۔ وقت کے ساتھ ادبی کارواں بھی بڑھتا گیا اور ذمہ داریوں میں بھی اضافہ ہوتا چلا گیا۔

1990 میں جناب کرامت بخاری اور در انجم صاحبہ نے بطور ادب سرائے انٹرنیشنل جنرل سیکریٹری کے فرائض سنبھالے اور 1996 تک ادارے میں اپنی ادبی خدمات سرانجام دیتے رہے۔ ان کی ادبی خدمات کو ادارہ قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے۔

شاہد بخاری کا نام بھی انہیں اہم ادبی ستاروں میں آتا جنہیں ہم نے اپنی ادبی دنیا میں ہمیشہ چمکتا دمکتا اور روشنیاں بکھیرتے ہوئے پایا ہے۔ ویسے تو شاہد بخاری صاحب عرصہ دراز سے ادب سرائے انٹرنیشنل سے منسلک رہے ہیں مگر 1997 سے لے کا 2010 تک ان کی گراں قدر ادبی خدمات جو انہوں نے بطور جنرل سیکریٹری فراہم کیں ادارہ انہیں بھی انتہائی قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے۔ 

انہوں نے ادب سرائے انٹرنیشنل کے ساتھ اپنے ادبی تعلق کا اظہار اور پذیرائی اپنی ایک ِخوبصورت غزل میں قلم بند کی ہے جس کا یہاں ذکر نہ کیا جائے تو بات ادھوری رہ جائے گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محفل ِشہناز میں اشعار کا دفتر کُھلا
“رکھیو یا رب یہ در گنجینئہ گوہر کُھلا “
دوسری سوموار کو ہر ماہ کی ہر شام کو

لائبریری کا ملا کرتا تھا سب کو در کُھلاکیوں ادب کے در وہاں اُمت پہ اُس کی بند ہوں
“واسطے جس شہ کے غالبؔ گنبد ِبے در کُھلا “

ہیں جمع گلزار، حماد، روحی، الیاس و بلال
سبزواری، سعدیہ یہ آسماں سب پر کُھلا

زیدی و موسیٰ نظامی، فوزیہ، نجمہ، عظیم
واسطی، عثمان، باقی ،سب پہ یہ شہ پر کُھلا

سائرہ، محمود، رزاقی، سحابی، طارق ، وقارو یمیں
واسطے جن کے ہے قصر ِشاعری کا در کُھلا

کامراں، کشفی، امیں، عاصم، رضا و صادقہ
کیا سخن ور ہیں اکٹھے کیسا یہ دفتر کُھلا

مَنفعت، نقوی، صنم، ناظر، سمیع، میجر نصر
ہیں سخن ور کیسے کیسے یہ نہ ٹی وی پر کُھلا

سیفی و زیبی، خلش، اقبال، شوکت اورحریم
جن کے شعروں سے رہا ہے شعر کا محور کُھلا

محشر و تسنیم کوثر، کاشف و رضیہ، لطیف
منفرد ہیں شعر گوئی میں نہیں ہم سر کُھلا

ریحانہ، عذرا، نثار، وفا، خلش، سحر انبالوی
کس کو کہتے ہیں سخن ور ان سے یہ ہم پر کُھلا

ہیں یہ جاوید، زیبی، طینوش، کرامت اور رفیق
جن کا ایک اک لفظ آتا ہے نظر گوہر کُھلا

خاصی تُک بندی تو اب شاہؔد بھی کرنے لگ گیا
یوں سرائے میں ادب کی اُس کا یہ جوہر کُھلا

شاعر: جناب شاہد بخاری


جنرل سیکریٹری ادب سرائے انٹرنیشنل : سال 1997 تا 2010

2010 کے بعد جناب جاوید شیدا ؔ بطور صدر، جناب ندیم اظہر ساگر اور محترمہ صفینہ سلیم چوہدری نے بطور جنرل سیکریٹری ادارے میں اپنی خدمات کا سلسلہ جاری رکھا۔

2017 تک ادب سرائے نے اپنے 30 سنہری سال مکمل کئے۔ ادب سرائے اپنے تمام معاونین اور ہمسفر ادبی دوستوں کو اور ان کے ادبی جذبے اور لگن کو سراہتا چلا آیا ہے۔ اور جہاں تک ادارے سے ممکن ہوا تمام اہم شاعروں، ادیبوں، مصنفوں، افسانہ نگاروں، صحافیوں، ادبی تنظیموں کے سربراہوں اور ادب سے محبت رکھنے والے دوستوں کو شہناز مزمل ادبی ایوارڈز کے سلسلے میں شامل کرتا رہا ہے اور ان کی خاطر خواہ پزیرائی بھی کرتا رہا ہے۔

ہم اپنے کارواں کے ہر ستارے کے لیے دعا گو ہیں اللہ انہیں ہر میدان میں کامیابیاں اور کامرانیاں عطا فرمائے، آمین۔

محترمہ ڈاکٹر شہناز مزمل صاحبہ کے نام میاں وقارالاسلام کی ایک خوبصورت غزل
آپ میرا یقیں گمان ہیں آپ

لفظ و معنی کا اک جہان ہیں آپمیں ادب کا ہوں ایک طالبِ علم
علم و دانش کا آسمان ہیں آپ

میرےلفظوں کی آپ حرمت ہیں
اور تخیل کی بھی اڑان ہیں آپ

آپ نے سوچ کو حروف دئیے
میرے احساس کی زبان ہیں آپ

میں سخن زار میں نکل آیا
راہبر آپ سائبان ہیں آپ

میرا قائم وقار آپ سے ہے
میری پہچان میرا مان ہیں آپ

شاعر: میاں وقارالاسلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


ادب سرائے انٹرنیشنل نے شاید وہ بھی خواب پورے کئے جو اس نے کبھی دیکھے بھی نہیں تھے۔ ادب سرائے انٹرنیشنل بہت سے لوگوں کا مقروض ہے جن کی مسلسل محبت، لگن، محنت اور حوصلہ افزائی کی وجہ سے ادب سرائے انٹرنیشنل نہ تھکا، نہ چوکا اور نہ ہی ہارا اور اپنے سفر کو جاری رکھتے ہوئے اپنی منزل کی طرف گامزن رہا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر شہناز مزمل، مادرِ دبستانِ لاہور، چئیر پرسن ، ادب سرائے انٹرنیشنل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ادب سرائے انٹرنیشنل چئیر پرسن فورم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ادب سرائے انٹرنیشنل چئیر پرسن فورم کی بنیاد سال 2017 میں ادب سرائے کے 30 سال مکمل ہونے پر رکھی گئی جس کا صرف ایک ہی مقصد ہے کہ 30 سالہ محبتوں کے قرض کو اب اتارنا شروع کیا جائے۔ اس مقصد کے حصول کے لیے ادب سرائےانٹرنیشنل چئیرپرسن فورم میں سب سے پرانی ساتھی ادبی تنظیموں کو بطورِ پینل اسٹ ساتھ شامل کیا گیا۔ جن میں سید قمر عباس ہمدانی بانی دریچہ ادب ویلفئیر سوسائیٹی پاکستان، خالد نصر چئیرمین دبستانِ خالد نصر، پاکستان، ناصر ملک، سی ای او اردو سخن، میاں وقارالاسلام فاونڈر وقارِ پاکستان، باقر بلال فاؤنڈر اردو سوشل اہم ترین معاونین ہیں۔
ادب سرائے انٹرنیشنل چئیر پرسن فورم کے تحت پینل اسٹ آرگنازیشنز ہمارے ساتھ شانہ بشانہ کام کر رہی ہے، اور اپنے اپنے ادبی حلقوں میں ادب سرائے انٹرنیشنل چئیر پرسن فورم کی نمائندگی کر رہی ہیں اسی طرح ادب سرائے انٹرنیشنل چئیر پرسن فورم بھی اپنے مقامی اور بین القوامی حلقہء احباب میں اپنے پرانے ساتھیوں کو پروموٹ کروانے میں اور محبتوں کے قرض اتارنے میں اپنا کردار ادا کر رہا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مختصرتعارف: مارول سسٹم لیٹریری اینڈ کارپوریٹ ریسرچ فورم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مارول سسٹم لیٹریری اینڈ کارپوریٹ ریسرچ فورم اپنی نوعیت کا ایک منفرد فورم ہے ۔ اس فورم کے تحت پاکستان میں پہلی دفعہ گوادر ریسرچ نیوز بکس اور گوادر ریسرچ ہینڈ بکس اور سی پیک سے متعلقہ ریسرچ پبلیکیشنز پر کام کیا گیا اور ایک درجن سے زیادہ بکس مرتب کی گئیں۔ اس کام میں ٹی ایس وائین ، شادوال گروپ، نیازی گروپ آف کمپنیز، گیٹ گروپ، تعلیمی بیٹھک ، گوادر انٹرنیشنل ، ادب سرائے انٹرنیشنل ،گوادر پروموشن الائنس اور گوادر بلڈرز اینڈ ڈیویپلرز ایسیوسی ایٹس اور دیگر کی براہ راست معانت رہی۔
اسی فورم کے تحت دوسرا بڑا کام بیسٹ لائف نوٹس کے نام سے کیا گیا ۔ اس سیریز کی بھی ایک درجن سے زیادہ کتابیں منظرِ عام پر آ چکی ہیں ۔ اس سیریز میں 100 سے زیادہ قلم کاروں نے حصہ لیا اور انہیں باقاعدہ سرٹیفکیٹس آف کنٹریبوشن جاری کیے گئے۔ اس طرح بیسٹ لائف نوٹس نہ صرف ایک ریسرچ بکس سیریز ہے بلکہ قلم کاروں کا ایک بہترین پلیٹ فارم بھی ہے۔ اس کام میں بھی ٹی ایس وائین ، شادوال گروپ، نیازی گروپ آف کمپنیز، گیٹ گروپ آف کمپنیز ، شاہین گروپ آف کمپنیز، آئیڈیل سٹینڈرڈ، ایکو کئیر، ایکمے گروپ، تعلیمی بیٹھک ، ادب سرائے انٹرنیشنل اور دیگر کی براہ راست معانت رہی۔
اسی فورم کے تحت وقارِ سخن کے نام سے ایک اور ریسرچ ورک شروع کیا گیا جس میں نامور سخن وروں کے ادبی سخن پاروں کو ایک جگہ اکٹھا کیا گیا۔ اس میں 300 سے زیادہ سخن ور اپنا حصہ ڈال چکے ہیں ۔ اس سلسلے کی بھی 10 سے زیادہ پبلیکیشنز مرتب ہو چکی ہیں ۔ اس سیریز میں بھی قلم کاروں کو باقاعدہ سرٹیفکیٹس آف کنٹریبوشن جاری کیے گئے ہیں۔ اس طرح وقارِ سخن نہ صرف ایک ریسرچ بکس سیریز ہے بلکہ قلم کاروں کا ایک بہترین پلیٹ فارم بھی ہے۔ اس کام میں بھی ٹی ایس وائین ، شادوال گروپ، نیازی گروپ آف کمپنیز، گیٹ گروپ آف کمپنیز ، شاہین گروپ آف کمپنیز، آئیڈیل سٹینڈرڈ، ایکو کئیر، ایکمے گروپ، تعلیمی بیٹھک ، ادب سرائے انٹرنیشنل ، دریچہ ادب ویلفئیر سوسائیٹی ، دبستانِ خالد نصراور دیگر کی براہ راست معانت رہی۔

مارول سسٹم لیٹریری ریسرچ فورم گذشتہ 15 سال سے ادب سرائے انٹرنیشنل کے ساتھ منسلک ہے اور ادب کی دنیا میں اپنی خدمات سر انجام دے رہا ہے۔ میاں وقارالاسلام کا کردارد اس ریسرچ میں مرتب کا ہے اور وہ 30 سے زیادہ ریسرچ پبلیکیشنز پر کام کر چکے ہیں اس کے علاوہ ان کی کچھ اور پبلیکشنز بھی ہیں جن میں مثل کلیات جو کہ ڈاکٹر شہناز مزمل کی 30 کتابوں میں سے شعری کولیکشن پر ایک مفرد کتاب ہے۔

ریسرچ پبلیکیشنز کے علاوہ میاں وقارالاسلام کے 4 شعری مجموعے ہیں جن میں من کٹہرا، شہرِداغدار ، سوزِ محشر اور دل آج بھی مقروض ہے شامل ہیں۔ شعری مجموعوں کے علاوہ ایک نثری کتاب بھی ہے جس کانام مائی لائف نوٹس ہے۔ انگریزی تصانیف میں ان کے 5 پورٹ فولیوز اور ایک شارٹ بائیو گرافی بھی مرتب ہو چکی ہے جب کہ ممبران کے ساتھ شارٹ بائیوگرافی سیریز پر کام ہو رہا ہے ۔

ادب سرائے انٹرنیشنل اور مارول سسٹم لیٹریری ریسرچ فورم کے پورٹ فولیوز بھی مرتب کیے گئے ہیں جن میں ان کی تمام تر ادبی خدمات کو ڈاکومنٹ کیا گیا ہے ان میں پروگرامز کی تصاویر، نیوز کٹنگز، پبلیکیشنز اور سرٹیفکیٹس کا تمام ریکارڈ باقاعدہ ترتیب سے محفوظ کیا گیا ہے ۔ اس کام کو محفوظ کرنے کا مقصد یہ ہے کہ لوگوں کی تمام اہم معلومات ایک جگہ پر مل جائیں اور اگر وہ چاہیں تو اپنے تحقیقی کام کو اسی طرح محفوظ کر کے آگے لا سکیں۔ تاکہ ادب کی دنیا میں کوئی کام ہمیں دوبارہ سے صفر سے شروع نہ کرنا پڑے۔ اور ہم ادب کی اور زیادہ بہتر انداز میں خدمت کر سکیں۔


۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سوشو آن، پاکستان کا اپنا مقبول ترین سوشل میڈیا نیٹ ورک
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سوشو آن پاکستان کا ایک مقبول ترین سوشل میڈیا نیٹ ورک ہے جو گزشتہ 15 سالوں کی انتھک محنت کی وجہ سے لاکھوں لوگوں اپنی طرف مائل کر چکا ہے اور اس کی مقبولیت میں دن دوگنی اور رات چوگنی ترقی ہو رہی ہے۔ مارول سسٹم سوشو آن کو تب سے جانتا ہے جب ان کی ٹیم میں دو ہی لوگ تھے جو کہ اس پراجیکٹ کے بانی ہیں یعنی جناب باقر بلال صاحب اور جناب محمد اقبال صاحب۔ ہمارے تعلق کی بنیاد گوادر پروموشن الائنس تھی جس کی وجہ سے یہ تعلق نہ صرف قائم ہے بلکہ گہرےسے گہرا ہوتا جا رہا ہے۔
مارول سسٹم لیٹریری اینڈ کارپوریٹ ریسرچ فورم ، ادب سرائے انٹرنیشنل اور گوادر پروموشن الائنس کے ممبرز سوشو آن کے ہر نئے فیچر زکو باقاعدہ سراہتے چلے آ رہے ہیں۔ بہت عرصہ سے ہم لوگ اس موضوع کو ذیر بحث لاتے رہے ہیں کے اردو کی ترقی کے حوالے سے سوشو آن کے پلیٹ فارم پر کچھ منفرد کیا جائے۔ اس مقصد کے حصول کے لیے جناب باقر بلال صاحب اور جناب محمد اقبال صاحب کی طرف سے میاں وقارالاسلام

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سوشو آن ہی کیوں؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

:::۔سوشو آن پاکستان میں تیزی سے بڑھتا ہوا سوشل نیٹ ورک ہے جس کا فیوچر تابناک ہے۔
:::۔ فیس بک پر ہمیں بیک اینڈ ایکسس نہیں جس کی وجہ سے ہم نہ کوئی پالیسی بنا سکتے ہیں نہ ہی اسے کنٹرول کر سکتے ہیں۔
۔ فیس بک پر ہم اپنی مرضی سے فیلٹریشن نہیں کر سکتے اور پری سیٹ فارمیٹس تبدیل نہیں کر سکتے۔
:::۔فیس بک کا مستقبل ایک سوالیہ نشان ہے، اگر فیس بک پاکستان میں بند کر دی جائے یا اس پر کیسی قسم کی ریسٹریکشن لگا دی جائے تو ہم کچھ نہیں کر سکتے۔
:::۔بہت سے سکولوں اور کالجوں میں فیس بک پر پابندی ہے کیوں کے طلبا اور طالبات کو ضرورت سے زیادہ آزادی دینے کی وجہ سے ان کا وقت ضائع ہوتا ہے۔ اس طرح کے پابندیاں اپنی جگہ پر ضروری ہیں مگر اس سے ہمارے پیچز اپنے مقصد کی تکمیل نہیں کر پاتے۔
:::۔سوشو آن پر ہمارے مقاصد کچھ مختلف ہیں ، ہم چاہتے ہیں کہ ہمارا ادبی کارواں ایک منفرد ادبی کلچر کو فروغ دے جس میں ہم ادب سے محبت رکھنے والے لوگوں کو ایک مفرد پلیٹ فارم دیں جس میں وہ اپنے ادبی ریسورسس کو بہتر طریقے سے مینیچ کریں اور بہتر انداز میں ایک دوسرے سے شئیر کر سکیں۔
:::۔ بہت سے ایسے لوگ بھی ہیں جن کی پرسنل لائف فیس بک کی وجہ سے ڈسٹرب ہوتی ہے اور وہ کمفارٹیبل محسوس نہیں کرتے جب انہیں فیس بک پر فالو کرنے کا کہا جاتا ہے۔ ان کا سیدھا جواب یہ ہوتا ہے کہ فیس بک فیملی پورٹل نہیں اور اسے گھر میں استعمال کرنے سے ان کی پرسنل لائف خراب ہوتی ہے۔ اس لیے وہ دوسرے فورمز کی طرف رجوع کرتے ہیں۔ تو ہم انہیں ایک بہتر فیلی ڈسٹربینس سے پاک پلیٹ فارم مہیا کرنا چاہتے ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وقارِ پاکستان | Marvels of Pakistan
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سوشو آن ، ادب سرائے انٹرنیشنل اور مارول سسٹم لیٹریری اینڈ کارپوریٹ ریسرچ فورم کے وہ ممبرز جو ادب کی دنیا میں وقارِ پاکستان کی حیثیت اور مقام رکھتے ہیں، ہم ان تمام سخن وروں کے کام کو منظرِ عام پر لارہے ہیں جس سے ان کے وقار اور پاکستان کے وقار میں مزید اضافہ ہو رہا ہے اور انشاءاللہ ہوتا رہے گا ۔ وقارِ پاکستان کی ویب سائیٹ اور سوشل میڈیا پیجیز پر ان کے ادبی نمونے رکھے جا چکے ہیں تاکہ تمام پڑھنے والوں تک اس کی رسائی ہو سکے۔ اس کے علاوہ ان ریسوسرس کو مختلف ادبی حلقوں ،سکولز ،کالجزز اور یونیورسٹیز تک رسائی بھی دی جا چکی ہے اور مزید ایکسیس دی جا رہی ہے۔
ڈیجیٹل بکس کا ریکارڈ بھی مرتب کیا جا چکا ہے جو کہ ایک ڈیجیٹل لائبریری کی شکل میں ویب سائیٹ پر موجود ہے تاکہ جو لوگ کتابوں سے محبت رکھتے ہیں وہ انہیں فری ڈاؤن لوڈ کر سکیں ۔ مزید کتابیں بھی اپ لوڈ کی جا رہی ہیں ۔ ادبی حلقوں، تعلیمی اداروں اور ادب سے محبت رکھنے والے لوگوں کو اس ڈیجیٹل لائبریری کی فری ایکسیس دی جا چکی ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وقارِ پاکستان لیٹریری اینڈ کارپوریٹ ریسرچ کلاؤڈ
Welcome to www.waqarepakistan.com
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

25 سالہ تعلیمی ، کاروباری ، سماجی اور ادبی مسافت

معاونین: 100 کارپوریٹ فورمز، 100 لیٹریری فورمز، 100 شعراء ، 100 شاعرات، 500 قلم کار، 70،000 ریڈرز اینڈ فالوورز

کانٹینٹ: 100 پبلیکیشنز، 10 ہزار سے زیادہ پبلیشڈ صفحات، 250 سے زیادہ نیوز پیپز اینڈ میگزین سرکل

کل 5 لٹریری ریسرچ سیریز، گوادر نیوزبکس، بیسٹ لائف نوٹس، وقارِسخن، ایم ایس نالج سیریز، شارٹ بائیو گرافیز

پاٹنرز: مارول سسٹم ، ادب سرائے انٹرنیشنل اور سوشو آن

www.marvelsystem.com | www.adabsaraae.com : www.socioon.com
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وقارِ پاکستان اپنی نوعیت کا واحد ڈیجیٹل لیٹریر ی ریسرچ کلاؤڈ ہے جس پر مارول سسٹم ، ادب سرائے انٹرنیشنل اور سوشو آن کے پروفیشنلز گذشتہ دو دہائیوں سے کام کر رہے ہیں۔ وقارِ پاکستان کا بنیادی مقصد قومی اور علاقائی زبانوں کو دور جدید کے تقاضوں اور ضروریات سے ہم آہنگ پلیٹ فارم مہیا کرنا ہے تاکہ ہماری نئی جینرینشن قومی اور علاقائی سطح پر اپنی منتخب زبان میں بھرپور طریقے سے سوشلائیز ہو سکے ۔ مزید یہ کہ جو لوگ قومی اور علاقائی زبانوں پر کسی بھی حوالے سے تحقیقی کام کر رہے ہیں ان کی حوصلہ افزائی کی جا سکے اور ان کے کام کو نہ صرف محفوظ کیا جا سکے بلکہ مضبوط سوشل میڈیا پلیٹ فارم کے ذریعے علاقائی ، قومی اور بین القوامی سطح پر زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچایا بھی جا سکے۔ ہمیں یقین ہے کہ یہ جدید سہولت علاقائی اور قومی زبان کی ترقی کے لیے سنگِ میل کی حیثیت اختیار کرے گی اور اس قومی اثاثے سے پورا ملک مستفید ہو گا۔
وقارِ پاکستان اپنے قیمتی معاونین کے بھرپور تعاون کے لیے ان کا شکر گزار ہے جن میں میاں وقارالاسلام فاؤنڈر اینڈ پرنسپل کنسلٹینٹ، مارول سسٹم ، ڈاکٹر شہناز مزمل، چئیر پرسن، ادب سرائے انٹرنیشنل، اور باقر بلال حسین، گروپ سی ای او، گیٹ گروپ، اینڈ فاونڈرسوشو آن کا کردار کلیدی حیثیت رکھتا ہے۔

اردو سوشل کے نام سے وقارِ پاکستان کا پہلا موڈیول لانچ کیا گیا۔ وقارِ پاکستان ، ڈاکٹر شہناز مزمل کی بھرپور ادبی خدمات کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے اور ان کے کام کو سراہتے ہوئے انہیں اعزازی طور پر “چیف ایمبیسڈر برائے اردو شوشل” منتخب کر چکا ہے ۔ جب کہ میاں وقارالاسلام بطور سی ای او اردو سوشل منتخب کر چکا ہے ۔ اردو سوشل موڈیول کو مضبوط بنیاد فراہم کرنے کے لیے وقارِ پاکستان کی ویب سائیٹ پر کافی حد تک کام کیا جا چکا ہے اور ان تمام ریسورسس کو مرحلہ وار اردو سوشل پلیٹ فارم کے ساتھ منسلک کیا جا رہا ہے۔

اردو سوشل کے نام سے سوشو آن کی بہترین کاوش آپ کے سامنے ہے، آپ آج ہی اس پلیٹ فارم پر مکمل طور پر فری رجسٹر ہو سکتے ہیں اور اپنی پسندیدہ زبان میں اپنے نئی سوشل لائف کا آغاز کر سکتے ہیں ۔ ہم آپ کے اس نئے سفر میں آپ کے ساتھ ہیں۔ ہم امید کرتے ہیں کہ آپ اپنے اس قومی اثاثے سے بھرپور فائیدہ اُٹھائیں گے اور قومی و علاقائی زبانوں کی ترقی کے اس سفر میں ہمارا ساتھ دیں گے۔

ہم جناب باقر بلال صاحب اور اقبال صاحب کے بے حد مشکور ہیں جنہوں نے اردو اور علاقائی زبانوں کو پروموٹ کرنے کے لیے ایک بڑا قدم اٹھایا ہے جو ی پاکستانی زبانوں کی ترقی کے لیے ایک سنگِ میل کی حیثیت رکھتا ہے۔ ہم ان کے اس جذبے کو بڑی قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں اور ان کی پوری ٹیم کی کاوشوں کو سراہتے ہیں۔ انشاءاللہ ہم اس سفر میں پوری طرح سے ان کے ساتھ ہیں اور ان کے ساتھ قدم سے قدم ملا کر چلیں گے۔

اردو سوشل ویب سائیٹ یا موبائل ایپ استعمال کرنا انتہائی آسان ہے۔ آپ گوگل پلے سٹور سے اردو سوشل کی ایپ ڈاؤن لوڈ کر سکتے ہیں اور اس میں اپنا فری اکاؤنٹ بنا کر اپنی نئی سوشل لائف کا آغاز کر سکتے ہیں، اسی طرح آپ اردو سوشل کی ویب سائیٹ


سے بھی اردو سوشل میں فری اکاؤنٹ بنا سکتے ہیں۔

اردو زبان ہماری قومی زبان ہے اور ہم سب کی پہچان ہے اور ہم سب کو اپنی پہچان پیاری ہوتی ہے۔ اپنی زبان کی ترقی کے لیے اپنا حصہ ڈالیں آج ہی اردو سوشل پر اپنا اکاؤنٹ بنائیں اور ہمارے اس سفر میں شامل ہو جائیں۔ اردو ہی ہماری منزل ہے اور اردو کے ہی سفر کو ہم نے اپنی ترقی کے لیے استعمال کرنا ہے۔
اردو کی طرح علاقائی زبانی بھی ہمیں پیاری ہیں، زبان ماں کی طرح ہوتی ہے شاید اسی لیے اسے مادری زبان کہا جاتا ہے۔ انشااللہ بہت جلد ہم ہر پاکستانی سے اس کی علاقائی زبان میں بات کریں گے۔ تب تک کے لیے اردو سوشل پر آپ سے اپنی قومی زبان میں بات کی جائے گی۔ اردو سوشل میں ہم آپ کو دل کی گہرائیوں سے خوش آمدید کہتے ہیں، اللہ ہم سب کا حامی و ناصر ہو! آمین
وقارِ پاکستان کی طرف سے تمام ہمسفر دوستوں کو خوش آمدید اور ان کے بھرپور تعاون کا پیشگی شکریہ

وقارِ پاکستان لیٹریری اینڈ کارپوریٹ ریسرچ کلاؤڈ فہرست معانین:

مارول سسٹم، ٹی ایس وائین، شادوال گروپ، نیازی گروپ آف کمپنیز، شاہین گروپ آف کمپنیز، آئیڈیل سٹینڈرڈز، ایکمے گروپ، سولو گروپ، تعلیمی بیٹھک، دی پروفیشنل، گوادر پرموشن الائنس، گوادر بلڈرز اینڈ ڈویپلرز، گیٹ گروپ آف کمپنیز، سوشو آن، ادب سرائے انٹرنیشنل، دریچہ ادب ویلفئیر سوسائیٹی، دبستانِ خالد نصر، اردو سخن، ایکو کئیر گروپ، یونیک سکول سسٹم، سائی سینس، سولو گروپ، اے ایم سی پاک، سولر ٹیک، انات گروپ، نیو وژن گروپ، سولو ان سائیٹ، میگا پلس، لاہور ادبی فورم، ٹیرا ٹیک، پریسکان انجینئرنگ، برکی گروپ، آگہی، وژنری گروپ، ڈائیٹ کئیر، آسماء سٹوڈیو ، گلوبیز ایوینیو، دی علماء یونیورسٹی، برین نیٹ، نیازی ایکسپریس، ایس پی نور اینٹرپرائزیز، سرائے نور، النور گوادر، عدن ولاز، اربن وسٹا، اظہر گروپ، دستک ٹی وی، تہمینہ درانی فاونڈیشن، پی ایچ ایم اے، سنی ایمپیکس، کینیڈین سٹی، سکائی ریج سینٹر، پی آئی ایم سی اور دیگر .

اس ڈرافٹ کا ابھی ادھا سفر باقی ہے، جب تک 100 آن لائن بکس اور 100 آن لائن فورمز کا ڈیٹا مکمل نہیں ہوتا، اور یہ تمام ریکارڈ وقارِ پاکستان پر مکمل ہونے کے بعد اردو سوشل نیٹ ورک کے ساتھ منسلک نہیں ہو جاتا، اس لے یہ ڈرافٹ ابھی اپنے ارتقائی مراحل میں ہے اور اپنے تمام دوستوں کا تعاون چاہتا ہے